179

حضرت انسان کی محسوس اور نامحسوس ہونے والی سزائیں!

طالب علم نے اپنے استاد محترم سے کہا :-
ہم کتنے گناہ کرتے ہیں نا؟
اور اللہ ہمیں سزا نہیں دیتا۔۔۔

استاد محترم نے فوراً جواب دیا :
یہ بھی سزا ہے کہ اللہ ہمیں سزائیں دیتا ہے
اور
ہمیں محسوس نہیں ہوتا۔

ہمارے دلوں کی سختی اور آنسو کا خشک ہوجانا،
کیا اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ
اللہ تعالی ہم سے ناراض ہیں ؟

نیک صالح اعمال کے طرف قدم بڑھانے میں کاہلی،
کیا اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ،
اللہ تعالی ہم سے ناراض ہیں ؟

ہمیں قرآن کریم کے تلاوت چهوڑئے جو ہفتے اور مہینے بیت جاتے ہیں،
کیا اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ،
اللہ تعالی ہم سے ناراض ہیں ؟

کتنی بار یہ آیت ہماری نظروں سے گزرنے کے بعد بهی ہم انجان بنے رہتے ہیں؟
اگر یہ قرآن ہم کسی پہاڑی پر نازل فرماتے
تو وہ اللہ کے خوف سے ریزہ ریزہ ہوجاتی۔ (القرآن)

کتنی طویل راتیں ہماری زندگی میں گزرتی رہیں لیکن قیام اللیل کی نوافل سے محروم رہنا،
کیا اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ،
اللہ تعالیٰ ہم سے ناراض ہیں ؟؟

کتنے خیر وبرکت کے مواقع ہماری زندگی میں آئے {رمضان، دس ذوالحجہ} پرہماری غفلت اور گناہوں کی دلدل میں غرق رہنا،
کیا اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ،
اللہ تعالی ہم سے ناراض ہیں ؟

زندگی میں تعلیم وتفسیر قرآن سیکھنے کے بہترین مواقع آئے لیکن اسے نظرانداز کرکے ہم دنیاوی لذتوں میں کهوئے رہے،
کیا یہ اس بات کی گواہی نہیں ہے کہ،
اللہ تعالی ہم سے ناراض ہیں ؟

کیا اس سے بھی بڑی کوئی سزا ہوسکتی ہے ؟ ؟ ؟

نیک عمل ہمیں بوجھ جیسا کیوں محسوس ہوتا ہے ؟

اللہ تعالیٰ کا ذکر کرتے ہوئے زبان کیوں لڑکھڑانے لگتی ہے ؟

اپنی شیطانی ونفسانی خواہشات کے سامنے ہم کمزور کیوں پڑجاتے ہو ؟

دنیاوی چکاچوند روشنیوں کو دیکھ کر ہمارا دل کیوں تڑپنے لگتا ہے ؟

کیا ہم دنیا ، پیسے اور عزت وشہرت کے غرور میں مبتلا نہیں ہوئے ؟

بتاو بھلا اس سے بڑھ کر کوئی سزا ہوسکتی ہے ؟ ؟ ؟

اللہ تعالی نے ہمیں اپنی غلطیاں بھلا کر دوسروں کی عیب جوئی ، جهوٹ اور بہتان تراشی میں مصروف کردیا۔

آخرت بھلا کر ہماری سب سے بڑی تمنا دنیا اور اسے حاصل کرنا بنادیا۔

کیا یہ بھی سزا کی ایک شکل نہیں ہے ؟ ؟ ؟

ہم نے کبھی اس آیت پر دهیان دیاِ ؟
اللہ تعالیٰ نے ان کے جانے کو پسند نہیں کیا اسی لیئے انہیں توفیق بھی نہیں عطا فرمایا اور یوں کہہ دیا گیا کے اپاہج لوگوں کے ساتھ تم بھی یہاں ہی دهرے رہو۔ (سورہ التوبۃ-القرآن)

بیٹا – اللہ سے ڈرو!
اللہ تعالٰی کے طرف سے سب سے چھوٹی سزا مال، اولاد اور صحت میں ہوتی ہے۔

لیکن!!!

سب سے بڑی سزا غیرمحسوس ہوتی ہے۔ بے شک اسے صرف مومن ہی اپنے دل کے حال تبدیل ہونے پر پہچانتا ہے۔

سوچیے گا ضرور۔۔۔

اور آگاہ ضرور کیجیئے گا کہ کیا رائے ہے آپ سب کی؟

پر جواب دینے سے پہلے ہم سب خود کو آئینہ میں ضرور دیکھنا ہو گا۔

حَسْبِيَ اللَّهُ لا إِلَـهَ إِلاَّ هُوَ عَلَيْهِ تَوَكَّلْتُ وَهُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِيمِ

اللہ سبحان وتعالی ہم سب کو مندرجہ بالا باتیں کھلے دل و دماغ کے ساتھ مثبت انداز میں سمجھنے، اس سے حاصل ہونے والے مثبت سبق پر صدق دل سے عمل کرنے کی اور ساتھ ہی ساتھ ہمیں ہماری تمام دینی، سماجی و اخلاقی ذمہ داریاں بطریق احسن پوری کرنے کی ھمت، طاقت و توفیق عطا فرما ئے۔ آمین!

(ماخوذ)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.